Jamia

بسم اللہ الرحمان الرحیم

نحمد ونصلی علیٰ رسو لہ الکریم امابعد

محترم قارئین! اس وقت عالمی سطح پر بالخصوص ہندوستان میں مسلمانوں کے سامنے ایک بڑا چیلنج ہے،باطل طاقتیں مسلمانوں پر حملہ آور ی کے نام پر اسلام کو اپنی ناپاک سازشوں کا شکار بنانے کی کوششوں میں دن ورات مصروف عمل ہیں، معاشرہ اور سماج تعلیم،اخلاقیات سمیت مختلف مسائل سے دوچارہے،اور بڑے مسائل کا شکارہے۔ان میں سب سے پہلا مسئلہ قوم کا تعلیم سے دوری اختیارکرنا ہے، جس کی وجہ سے بڑے مسائل درپیش ہیں،جبکہ مذہب اسلام اور ملت اسلامیہ کے خلاف قومی سطح اور عالمی سطح پر سازشیں ہورہی ہیں، پوری دنیا میں مغربی میڈیا اسلام کو بدنام کرنے کی کوشش کررہا ہے،ہندوستان میں مسلمانوں کی تعلیمی کیفیت دلتوں سے بھی بدتر ہوتی جارہی ہے، اس کی بڑی وجہ علوم اسلامیہ اور عصری علوم میں عدم توازن ہے، مدارس بھی الحمد للہ رات ودن محنتوں میں مصروف ہیں، اور عصری تعلیم کے لئے ادارے بھی چل رہے ہیں، مسلم معاشرہ میں تعلیمی پسماندگی کے خاتمہ اور اپنے ارد گرد کے ماحول کو اسلامی ماحول میں رنگنے کی اشد ضروت کے مدنظر دانشوران قوم وملت،علماء صلحا،ء خصوصاً امیر الہند حضرت مولانا سید اسعدمدنی صاحب نوراللہ مرقدہ صدر جمعیۃ علماء ہند کے حکم کے مطابق ۵۰۰۲؁ء میں مولانا مدنی ایجوکیشنل اینڈویلفیئر سوسائٹی کا قیام عمل میں آیا، جس کے تحت پہلے مرحلہ میں نسوانی تعلیم کے لئے ایک معیاری تعلیمی ادارہ قائم کیا گیا جو آج الحمد اللہ دہائی سے عرصہ سے دینی،دعوتی،اصلاحی،وتعلیمی سرگرمیاں بخوبی انجام دے رہاہے،جس میں علوم اسلامیہ اور عصری علوم کے مابین توازن بناکررکھا گیا ہے، جہاں بچیاں اپنی

،علمی پیاس بجھاکر مختلف جگہوں پر خدمات انجام دے رہی ہیں

اسی سلسلہ کی اگلی کڑی جامعہ الہدایہ جامعہ نگر نگلہ راعی مظفرنگر ہے، جس کا مقصد ہی امت کے نونہالوں اور قوم کے مستقبل بچوں کو دینی اور عصری تعلیم سے مزین کرنا ہے، جہاں بچوں کوعمدہ حافظ قرآن کے ساتھ،اسلامیات،انگلش،کمپیوٹر، سائنس، ہندی، میتھ کے ساتھ صحت کے میدان میں بھی مضبوط تربنانا ہے،منتظمین کی ہمیشہ یہ کوشش رہی ہے کہ ملت میں ایک ایسی کھیپ تیار کی جائے جو علوم عصریہ سے واقف ہو اور اسلامی تعلیم وتربیت کو اپنا شعار بنانے میں فخر محسوس کریں۔

جامعہ الہدایہ جامعہ نگر نگلہ راعی ایک دینی، دعوتی ،اصلاحی اور علوم عصریہ کا اہم مرکز ہے ، جس کے قیا م کا مقصد قرآن وحدیث اور اسلامی فکر ،دعوت وتبلیغ کے ساتھ عصری علوم انگلش میڈیم اسکولوں کے متبادل کے طور پر پیش کرناہے ۔تاکہ

کے ساتھ عصری علوم انگلش میڈیم اسکولوں کے متبادل کے طور پر پیش کرناہے ۔تاکہ قوم کے اندر اسلامی روح وفکرودینی مزاج،زمانہ کے ساتھ ترقی کی راہوں میں کندھے سے کندھا ملاکر چلا جاسکے۔ جس کو مندرجہ ذیل شعبوں میں تقسیم کیا گیاہے۔

جامعۃ الہدایہ جامعہ نگر

شعبہ قرآن کریم

جس میں قرآن کریم کی تعلیم عمدہ نظام،تجوید وترتیل کے ساتھ بہترین مشاق وماہر قراء کے زیرنگرانی تعلیم کا نظم۔تاکہ قرآن کریم کو اس کے حقوق کے ساتھ ادائیگی کے ساتھ پڑھا جاسکے۔

شعبہ دینیات

اس شعبہ میں دینی کتب، اوراسلامی رسائل ،اخلاقیات کی تعلیم کا نظم ۔تعلیم کے ساتھ ساتھ طلباء کی اسلامی واخلاقی نگرانی وتربیت نیز سیرت واخلاق کی اصلاح کا خصوصی نظم۔

شعبہ دعوت وتبلیغ

اس شعبہ میں دعوتی وتبلیغی جدوجہد کی جاتی ہے ، اور ایسے اجتماعات منعقد کئے جاتے ہیں کہ جن کے ذریعہ معاشرہ کی اصلاح ہوسکے ۔نیز طلباء میں دعوتی رجحان پیدا کرنے کے لئے دعوتی اسفار کا نظم۔ شعبہ خوشخطی اس شعبہ میں طلباء میں خوشخطی پر خصوصی توجہ دی گئی ہے ۔جس میں ماہر کتابت کی نگرانی میں طلباء میں عمدہ تحریر کا شوق پیدا کرنے کا نظم ہے۔آج کل عموماً دیکھاجارہاہے کہ مدارس میں طلباء اس قیمتی صلاحیت سے عاری ہوتے جارے ہیں۔

انجمن بزم ثقافت

اس شعبہ میں طلباء میں تقریری وتحریری صلاحیتوں کو اجاگر کرنے کا پلیٹ فارم مہیا کرانا، جس میں طلباء مختلف زبانوں بالخصوص اردو، عربی ، انگلش اور ہندی زبانوں میں تقاریرکرسکیں ،اور فن خطابت میں معیاری صلاحیتوں کو اجاگر کرسکیں تاکہ قلم کے ساتھ ساتھ تقریر کے ذریعہ صحیح دین دوسرں تک پہنچاسکیں۔

(الہدایہ پبلک اسکول (انگلش میڈیم اسکول

علماء کبارودانشوران کے مشورہ سے عصرحاضر کے تقاضوں کو مدنظر رکھتے ہوئے اور دینی وملکی تقاضہ کے تحت الہدایہ پبلک اسکول کے نام سے انگلش میڈیم اسکول کا قیام عمل میں آیا ، جس کا مقصد اسلامی ماحول میں قوم کے مستقبل کے لئے نسل نو کی ایسی کھیپ تیار کرنا ہے جو دینی مزاج کے ساتھ علوم اسلامیہ سے واقفیت کے ساتھ جدید تعلیم ،ٹیکنکل وکمپیوٹر کی تعلیم سے بھی آراستہ ہو۔ جس کومندرجہ ذیل شعبوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔ شعبہ ہندی ، شعبہ انگلش ، شعبہ کمپیوٹرسینٹر۔میتھ۔سائنس۔شعبہ صحت ۔

Translate »